دی نیوز اردو

جب حکمران کرپشن کرتے ہیں تو ملک و قومیں تباہ ہو جاتی ہیں: وزیراعطم عمران خان

اسلام آباد (دی نیوز اردو)کنوینشن سینٹر اسلام آباد میں تحریک انصاف کے 23 ویں یوم تاسیس پر خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ تحریک انصاف کے 23 سال بتاتے ہیں کہ جدوجہد کیسے ہوتی ہے۔انہوں نے کہا کہ میرا سیاست میں آنے کا مقصد دولت یا عزت نہیں بلکہ میرا وژن نظریہ پاکستان تھا، جس کا مقصد ملک کو ایک فلاحی ریاست بنانا تھا، نظریہ پاکستان علامہ اقبال نے دیا تھا اور انہوں نے یہ نظریہ ریاست مدینہ سے لیا تھا، ہم نے بھی انہی اصولوں پر اس ریاست کو لیکر آنا ہے اور جب ریاست اوپر جائے گی تو بہت اوپر تک جائے گی۔ ان کا کہنا تھا کہ جب 60 کی دہائی میں ہمارے حکمران بیرون ملک جاتے تھے تو ان کی عزت ہوتی تھی، عزت کم ہونے کی وجہ یہ تھی کہ حکمرانوں نے اپنے بارے میں سوچنا شروع کر دیا، جب حکمران کرپشن کرتا ہے تو ملک اور قوم تباہ ہو جاتے ہیں۔

عمران خان نے بتایا کہ کوئی سوچ بھی نہیں سکتا تھا کہ ملائیشیا پاکستان سے اوپر چلا جائے گا لیکن مہاتیر محمد ملائیشیا کو اتنا اوپر لے گیا کہ جب وہ گیا تو دنیا میں ملائیشیا کا نام تھا لیکن جب ان کے بعد وہاں بھی چور حکمران آ گئے اور پھر عوام نے دوبارہ 93 سالہ مہاتیر محمد کو منتخب کیا کیونکہ انہیں پتہ ہے کہ وہ ایک اچھا آدمی ہے۔انہوں نے کہا کہ سیاست میں آنے کے 15 سال تک تو لوگ ہمارا مذاق اڑاتے تھے کہ یہ تو تانگا پارٹی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ جب آپ کا مشن اللہ کے لیے ہو تو ٹائم کوئی اہمیت نہیں رکھتا، قائد اعظم محمد علی جناح لندن کے مہنگے ترین وکیل تھے لیکن انہوں نے 40 سال تک جدوجہد کی، اسی طرح نیلسن منڈیلا نے اپنی قوم کے لیے 27 سال جیل کاٹی۔

وزیراعظم نے کہا کہ جب آپ جدوجہد کر کے آگے آتے ہیں تو آپ اچھے برے وقت سے گزر کر آگے آتے ہیں، جدوجہد ایک قسم کی ٹریننگ ہوتی ہے جو آپ کو مضبوط کرتی ہے۔اپوزیشن کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے وزیراعظم کا کہنا تھا کہ یہ لوگ کہتے ہیں کہ بہت مہنگائی ہو گئی ہے، اس میں کوئی شک نہیں ہے کہ مہنگائی ہے اور ہمیں اس کا بھی احسا ہے کہ لوگ پریشان ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ایک طرف مولانا فضل الرحمان ہمارے خلاف تیاری کر رہا ہے تو ایک طرف بلاول بھٹو صاحب ہمارے خلاف باتیں کرتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ سمجھ نہیں آتی کہ شام کو ٹی وی پر عجیب شکلیں بنا کر کہتے ہیں پی ٹی آئی نے یہ کر دیا وہ کر دیا۔
مسلم لیگ ن کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ جب شہباز شریف گئے تو 1100 ارب روپے کا خسارہ چھوڑ کر گئے۔ایک بار پھر وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار پر بھرپور اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ عثمان بزدار ثابت کرے گا کہ پنجاب میں ان سے بہتر کوئی وزیراعلیٰ نہیں آیا۔انہوں نے کہا کہ یہ سب لوگ اسمبلی میں شور مچاتے ہیں اور جمہوریت بچانے کی باتیں کرتے ہیں، ان لوگوں کا جمہوریت کو بچانے کا مطلب اپنی کرپشن کو بچانا ہے، یہ لوگ صرف این آر او کے لیے اسمبلی میں شور مچاتے ہیں، یہ لوگ جو مرضی کر لیں ہم انہیں کسی صورت این آر او نہیں دینے والے۔

سابق وزیراعظم کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ نواز شریف علاج کے لیے ملک سے باہر جانا چاہتے ہیں، شہباز شریف کے اقتدار میں آتے ہی ان کی 11 کمپنیاں بن جاتی ہیں لیکن ان کے دور حکومت میں کوئی ایک ایسا اسپتال نہیں بنا جہاں ان لوگوں کا علاج ہو سکے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: